کشمیریوں کا راستہ نواز شریف ، بربادی کا سفر آزاد کشمیر میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دینگے مریم نواز

مظفرآباد(وقائع نگار خصوصی)مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نوازشریف نے کشمیر میں الیکشن مہم کا آغاز کر دیا، اس حوالے سے مظفرآباد شہر حلقہ تین ایل اے انتیس کا جلسہ گزشتہ روز منعقد ہوا جہاں حلقہ تین سے ہزاروں کارکنان جوش وجزبے جلسے میں شریک ہوئے۔سٹیج سے تیسری بار پھر افتخار کے فلک شگاف نعرے، شاندار جلسے کے انعقاد پر قیادت مُسلم لیگ اور مریم نواز کی بیرسٹر گیلانی کو تھپکی۔ جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مریم نواز کہا کہ میں جب کوہالہ سے داخل ہوئی تو دیکھا کہ نے کہا کہ میری رگوں میں کشمیری خون ہے، میری رگوں میں کشمیری باپ اور کشمیری ماں کا خون ہے، میرا باپ، میری ماں، میرے دادا دادی اور نانا نانی سب کشمیری ہیں، میں آج اپنے گھر آئی ہوں، کشمیری چاہے سرحد کے اس پار ہو یا اس پار، کشمیری ایک ہیں، پاکستان آپ کے ساتھ ہے اور انشائاللہ دکھوں اور تکلیفوں کو ایک نہ ایک دن ختم ہونا ہے، کشمیریوں کی تکالیف نوازشریف کی قیادت میں ختم ہوں گی، وہ آپ کی سب جنگیں لڑے گا، نوازشریف آپ کی جنگ لڑے بلکہ آپ کے حقوق اور آزادی کی جنگ لڑے گا، وہ جنگ جیت کر آپ کی جھولی میں پھینکے گا۔آج مظفرآباد کی عوام کا جوش اس بات کی غمازی کرتا ہے کہ مسلم لیگ ن آئندہ عام انتخابات میں پاکستان اور آزاد کشمیر میں دو تہائی اکثریت سے حکومت بنائے گی نوازشریف جیسے وزیراعظم جس کی دہلیز پر چل کر بھارت کے وزرائاعظم آتے تھے اور ایک ایسا سلیکٹڈ جو ووٹ چوری کرکے آتا ہے، اس کے دور میں بھارت کی اتنی ہمت ہو جاتی ہے کہ وہ کشمیر کی حیثیت تبدیل کردیتا ہے۔‘‘مین صرف یہ کہہ سکتاہوں کہ میں کیا کروں، مودی میرا فون نہیں اٹھاتا، امریکہ کا صدر مجھے بلاتا نہیں ہے‘‘ کیا ان الفاظ سے آپ کشمیر میں کمپین کریں گے میں کشمیریوں سے سوال کرنا چاہتی ہوں کیا آپ وہ سنہری دور واپس دیکھنا چاہتے ہیں جس میں شاندار معاشی ترقی، لوگوں کو روزگار، بنیادی سہولیات کی فراہمی، افراط زر کا اضافہ، دہشتگردی کا خاتمہ، لوڈشیدنگ سے نجات ممکن ہوئی یا یہ دور دیکھنا چاہتے ہیں جس میں لوڈ شیڈنگ میں اضافہ، دہشت گردی، مہنگائی، بیروزگاری، افراط زر میں کمی ممکن ہوئی، پاکستان میں ایک وقت تھا جب آٹا بیس روپے،چینی پچاس روپے، پٹرول 70 روپے میسر تھا پورا ملک ترقی کی راہ پر چل رہا تھا شاندار منصوبے لگ رہے تھے لوگوں کو روزگار میسر تھا کاروبار پھل پھول رہے تھے آج وہی پاکستان ہے جہاں نہ روزگار ہے نہ کوئی معاشی ترقی صرف مایوسیاں ہی مایوسیاں ہیں لوگوں کے گھروں میں فاقے پڑ چکے آج آٹا 70 روپے اور چینی 130 روپے، ملک کے قرضے دوگنا ہو گئے کیا صرف اس اذیت کے لئے عمران خان وزیراعظم پاکستان بنا تھا عمران خان نے جب چیخ چیخ کر دنیا کو بتانا تھا کہ بھارت کشمیریوں پر ظلم وستم کے پہاڑ توڑ رہا ہے اس نے قوم کو دو منٹ کی خاموشی اختیار کرنے پر لائن میں لگا دیا عمران خان کی مرضی کے بغیر ایسا ممکن ہی نہیں کہ بھارت کشمیر میں کوئی غیر قانونی اقدامات اٹھا سکے بھارت کے پانچ اگست کے اقدام کے پیچھے عمران خان کی مرضی اور منشاء شامل تھی جس کو سودا یہ امریکا میں جا کر امریکی ثالثی کی صورت میں کر کے آیا تھا کشمیری سمجھدار قوم ہے میں کشمیریوں سے یہ کہنا چاہتی ہوں کہ نواز شریف روشن پاکستان کے خواب کو عملی جامہ پہنانے کی خاطر مسلم لیگ ن کو ووٹ دے کر حلقہ تین سے بیرسٹر افتخار گیلانی کو کامیاب بنائیں تبدیلی کی نحوست کو کوہالے سے پار ہی رکھیں جیسا کہ آپ سب لوگ دیکھ رہے ہیں ان نالائقوں نے کیسے پاکستان کا بیڑہ غرق کیا صدر مسلم لیگ ن آزاد جموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا کہ تحریک انصاف آزادکشمیر کی عوام کو سبز باغ دیکھانے میں مصروف ہے کشمیری عوام سادہ لوح سہی لیکن بے وقوف نہیں ہے اور وہ تحریک انصاف کے کسی بھی سبز باغ کے چکر میں نہیں آئیں گے۔پاکستان میں تحریک انصاف کی حکومت کو تین سال سے زیادہ کا عرصہ ہو چکا ہم یہ پوچھنا چاہتے ہیں کہ آپ ان تین سال کے عرصہ میں وہاں پر کوئی ایک میگا پراجیکٹ نہ لگا سکے آزاد جموں و کشمیر کو بدلنے کی بات کیسے کرتے ہیں۔ہم یہ پوچھنا چاہتے ہیں کہ آپ کے دور حکومت میں پاکستان میں اشیاء خوردونوش کی قیمتیں دوگنی ہوگئی لوگوں سے انکا روزگار چھن گیا کرپشن دوگنا ہو گئی کیا آپ اسی تبدیلی کا تحفہ آزادکشمیر کی عوام کو دینا چاہتے ہیں آپ نے 5 اگست کو کشمیر بھارت کی جھولی میں ڈال کر جو کہلواڑ کشمیری ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں سے کیا ہے اس کا جواب آپ کو 25 جولائی کو کشمیری عوام ووٹ کی پرچی سے بھیانک شکست کی صورت میں دیں گے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے میزبان جلسہ نامزد امیدوار مسلم لیگ ن بیرسٹر افتخار گیلانی نے کہا کہ ہم قائد پاکستان نواز شریف کے ویژن کے مطابق گذشتہ الیکشن میں اپنی کمپین کے دوران اپنے منشور میں عوام کو بنیادی سہولیات دینے کا وعدہ کیا تھا جس پر اللہ پاک کے فضل وکرم سے سرخرو ہوئے تاؤ بٹ سے لے کر بھمبر تک آزادکشمیر کے اندر بالخصوص حلقہ تین مظفرآباد میں صحت، تعلیم، روزگار، انسفٹکچر، سیاحت، معیشت مضبوط سے مضبوط تر بنی، مظفرآباد کے اندر صحت، تعلیم، روزگار، عوام کو ان کی دہلیز پر فراہم کیا گیا انفسٹکچر میں اس قدر بہتری آئی کہ عالمی معیار کے مطابق مظفرآباد کو تعمیر کیا گیا۔آج مسلم لیگ ن اپنی اسی کارکردگی کی بناء پر عوامی مقبولیت میں نمبر ون جماعت ہے قائد پاکستان میاں محمد نواز شریف نے آزادکشمیر کا ترقیاتی بجٹ دوگنا کیا اور نام نہاد تبدیلی سرکار جو کشمیری عوام کو سبز باغ دیکھا رہے ہیں انھوں نے آزادکشمیر کے بجٹ پر پانچ ارب کا کٹ لگا دیا کیا یہ کشمیری عوام سے دشمنی نہیں ہے مظفرآباد کی عوام اس دشمنی کا بدلہ 25 جولائی کو ووٹ کی پرچی سے لے گی انھوں نے مزید کہا کہ مسلم لیگ ن کی مقبولیت کا یہ عالم ہے کہ آج قائد پاکستان میاں محمد نواز شریف کی بیٹی، کشمیر کی بیٹی، محترمہ مریم نواز جہاں کھڑی ہوتی ہیں وہاں ہی ان کا جلسہ ہو جاتا ہے عوام کا جوش وجذبے سے بھرپور ٹھاٹے مرتا سمندر اس بات کی گواہی ہے کہ کشمیری عوام قائد پاکستان میاں محمد نواز شریف، راجہ محمد فاروق حیدر خان، اورمحترمہ مریم نواز کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہیں اور انھیں اپنا لیڈر گردانتے ہیں۔

پٹہکہ(جاوید عباسی سے )محترمہ مریم نواز نے کہا کہ عمران خان مقبوضہ کشمیر کو بھارت کی جھولی میں پھینک کر آگیا کشمیر کو بھارت کی جھولی میں پھینکنے کے بعد آپ کشمیریوں کے پیچھے کس لیے آتے ہو میں کشمیری عوام سے مل کر عمران خان سے پوچھنا چاہتی ہوں کہ مقبوضہ کشمیر میں شہید ہونے والوں کے خون کا حساب کون دے گا مقبوضہ کشمیر کے بعد آزاد کشمیر کو صوبہ بنانے کی کوشش کی جارہی ہے بچہ بچہ کٹ مرے گا کشمیر صوبہ نہیں بنے گا ان خیالات کا اظہار مسلم لیگ ن کی نائب صدر محترمہ مریم نواز نے پٹہکہ میں انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جو شخص ساری زندگی کرکٹ کھیلتا رہا اس کو خارجہ پالیسی کا کیا پتہ پاکستان کی نااہلی کو آزاد کشمیر میں لانے کی کوشش کی جارہی ہے پٹہکہ کے لوگو عمران خان ووٹ مانگنے آئے آپ کہیں کہ آپ نے مقبوضہ کشمیر کیوں بیچا مقبوضہ کشمیر ہمارے ہاتھوں سے گیا عمران خان نے کہا میں نے دو منٹ کی خاموشی اختیار کی آپ بھی خاموش ہو جائو وہ خاموشی کب ٹوٹے گی عمران خان نے اپنی زبان پر تالہ لگا دیا آپ کی خارجہ پالیسی کیا ہے بھارت نے کشمیر اپنے ساتھ جوڑ لیا تو میں کیا کر سکتا اگر تم کچھ نہیں کر سکتے تو تم کو کس نے حق دیا کہ تم بائیس کروڑ پاکستانی اور کشمیریوں کو کیوں گمراہ کر رہے ہو برہان وانی شہید کا مقدمہ نواز شریف نے پوری قوت سے لڑا کل برہان وانی کی پانچویں برسی کے موقع پر وہ ایک جملہ بھی نہ کہہ سکے میں نے نواز شریف کے ساتھ چار سال کام کیا میں اچھی طرح جانتی تھی وہ عوام کو کہتے تھے میں نے آٹا ،چینی ،گھی ،کتنے سستے کیے بجلی کتنی سستی کی عمران خان نے بائیس کروڑ عوام کو مہنگائی سے مار دیا نواز شریف ایک محب وطن پاکستانی ہیں ہمارے دورے حکومت میں پاکستان کے اندر کوئی لوڈ شیڈنگ نہیں تھی نواز شریف کے خلاف مشکلات پیدا کی گئیں پاکستانی عوام نواز شریف کو آج بھی دعائیں دے رہی ہیں آج پاکستان کی حالت تباہ کن ہوچکی ہے روزانہ کی بنیاد پر پاکستان میں مہنگائی ہو رہی ہے عمران خان کہتا ہے کہ ہمیں شاہد آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑے عوام کو روٹی اور چینی دینے کے لیے ان کے پاس پیسہ نہیں آزاد کشمیر میں لوگوں کے ضمیر خریدنے کے لیے آپ کے پاس پیسے ہیں کہاں سے آیا وہ پیشہ کیا کشمیر بھیج کر وہ پیسہ لایا گیا یا عوام کے جیبوں سے یہ پیسہ لایا گیا میرے کشمیر کے لوگ بکنے والے نہیں ہیں پٹہکہ کے لوگوں کا جوش جذبہ بتا رہا ہے کہ مسلم لیگ ن اللہ کے فضل سے آزاد کشمیر کی سب سے بڑی جماعت ہے انتخاب میں بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کریں گے اگر آزاد کشمیر کا مینڈیٹ چوری کرنے کی کوشش کی گئی تو اس کے نتائج خطرناک ہوں گے ہم کشمیری عوام کو گیس ،بجلی کے بوجھ تلے نہیں دبنے دیں گے کشمیریوں کا راستہ نواز شریف ہے بربادی کا سفر آزاد کشمیر میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دے سکتے کشمیری اس وقت بھی میاں نواز شریف کیساتھ کھڑے ہیں کشمیری نواز شریف کی بہادری کیساتھ کھڑے ہیں یا کشمیر فروش عمران خان کیساتھ میں اپنی مائوں بہنوں اور دیگر جلسہ والوں کو بتانا چاہتی ہوں آپ گھروں میں نہ بیٹھیں دوستوں بھائیوں محلے والوں کیساتھ باہر نکل کر شیر پر مہر لگائیں نورین عارف صاحبہ آپ کی ماں بھی ہیں بہن بھی ہیں ان کا ساتھ دینا اپنی کامیابی کی جنگ جیت کے آنا جو آپ کے ووٹ پر ڈاکہ ڈالے اس کوبھاگنے نہ دینا ڈسکہ کی طرح گلے سے پکڑنا عوام اب جاگ چکے ہیں دو ہزار اٹھارہ میں دھاندلی کا لوگوں کو علم نہیں تھا ووٹ چوروں کو پکڑنا نہیں بلکہ کیفر کردار تک پہنچانا ووٹ پر ڈاکہ نہیں ڈالنے دینا ٹھپے پہ ٹھہ شیر پہ ٹھپہ کے نعرے بھی لگوائے انتخابی جلسہ سے کیپٹن صفدر،محترمہ نورین عارف،مرتضی علی گیلانی ودیگر نے بھی خطاب کیا جلسہ کے اختتام پر مریم نواز شریف نے نعرے بھی لگوائے پٹہکہ زندہ باد ،نواز شریف زندہ باد، یوتھ ونگ زندہ باد ،آزاد کشمیر زندہ باد،مقبوضہ کشمیر زندہ باد ،،
دوسرا انٹرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں