طالبان نے عام معافی کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان دشمن نہیں بنانا چاہتے، افغانستان کسی جنگ کا حصہ نہیں بنے گا، کسی سے انتقام نہیں لیا جائے گا۔ امریکا کیلئے کام کرنے والوں کو عام معافی ہے، نوجوانوں کو ملک نہیں چھوڑنا چاہیے۔طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کا پہلی پریس کانفرنس میں کہنا تھا کہ آزادی ہمارا حق تھا جسے ہم نے حاصل کرلیا، تاہم کسی سے انتقام نہیں لیا جائے گا، یقین دہانی کراتے ہیں کسی سے کوئی تصادم نہیں ہوگا۔ذبیح اللہ مجاہد نے اعلان کیا کہ امارات اسلامی کسی سے انتقام نہیں لے گی۔ یقین دہانی کراتے ہیں افغانستان کسی جنگ کا حصہ نہیں بنے گا۔ سربراہ کے حکم پر سب کو معاف کر دیا۔ طالبان اندرونی اور بیرونی دشمن نہیں بنانا چاہتے۔ تمام سیاسی جماعتوں پر مشتمل اسلامی حکومت تشکیل دیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں